جمعرات , 27 جولائی 2017

Home » جغرافیہ » اسلامی ملک جبوتی کا تعارف

اسلامی ملک جبوتی کا تعارف

جبوتی کی تاریخ :

اس خطے میں عربوں کی آمد تیسری صدی عیسوی میں ہوئی۔ موجودہ دور کے ’’عفار ‘‘لوگ جو جبوتی کے دو بڑے نسلی گروہوں میں سے ایک ہیں ان کے آباؤ اجداد کا تعلق انہیں عرب آباد کاروں سے ہے۔ دوسرا اہم ترین نسلی گروپ صومالی عیسا کہلاتا ہے جو بعد میں آئے۔ اسلام اس خظے میں 850عیسوی میں متعارف ہوا ۔ انیسوی صدی میں مقامی حکمرانوں اور سرداروں سے معاہدوں کے بعد جبوتی پر فرانس نے قبضہ کر لیا۔ 1888ء میں فرانس نے یہاں صومالی لینڈ کے نام سے نو آبادی قائم کی اور 1892میں جبوتی اس نو آباد کا دارالحکومت بنا ۔ 1977ء میں عفار اور صومالی اور عیسا قوم پر مشتمل فرانسیسی علاقہ جبوتی کے نام سے نیا ملک بنا۔

’’جبوتی‘‘ افریقا کا مسلمان ملک ہے، جو ایتھوپیا سے منسلک اور صومالیہ، اریٹیریا کے پڑوس میں واقع ہے۔ اس کا شمار افریقا کے غریب ممالک میں ہوتا ہے، جو ۱۹۷۷ء میں فرانس کے قبضہ سے آزاد ہوا تھا۔ غربت کی وجہ سے اس ملک کی باقاعدہ کوئی فوج نہیں۔ فرانس اور امریکا کے فوجی اس کی حفاظت پر تعینات ہیں۔ جبوتی کی آمدنی کے صرف دو اہم ذرائع ہیں۔ اول، کھیتی باڑی، بھیڑ بکریاں اور اونٹ پال کر سعودی عرب ایکسپورٹ کرنا اور دوسرا اہم ذریعہ اس کی بہت بڑی بندرگاہ ہے کیونکہ ایتھوپیا کے پاس سمندر نہیں، لہٰذا ایتھوپیا سے تمام سامان جبوتی کے راستے ہی برآمد کیا جاتا ہے۔ اگر کوئی غیر ملکی سرمایہ کار تین لاکھ ڈالر تک سرمایہ کاری کرے تو جبوتی کی حکومت دس سال تک امپورٹ ڈیوٹی اورانکم ٹیکس معاف کر دیتی ہے۔ ملک میں بجلی، زمین سستے داموں حکومت کی طرف سے دی جاتی ہے۔ یہاں بہت بڑا ایکسپورٹ پروسیسنگ زون بھی ہے اور بنے بنائے بڑے بڑے تیار شیڈ بھی ملتے ہیں۔ اس بندرگاہ کو دبئی حکومت نے جدید بنانے کے بعد ٹھیکے پر لے لیا ہے۔

جبوتی کا جغرافیہ (محل وقوع)

شمالی طرف اریٹیریا اور جنوبی طرف صومالیہ ہے ، جبکہ مغرب میں ایتھوپیا کے درمیان مشرقی افریقہ میں واقع اس ملک کی سرحدیں خلیج عدن(Gulf of Aden) اور بحر احمر(Red Sea) سے ملتی ہیں۔ جبوتی کا رقبہ 23ہزار مربع کلومیٹر ہے۔ جبوتی کی سرحد بحر احمر سے ملتی ہے جسکی وجہ سے اسے ایک بڑی سٹریٹجک اہمیت حاصل ہے ۔

آبادی اور مذاہب

جبوتی میں مسلمان اکثریت میں ہیں۔ کل آبادی کا 94%مسلمان ہیں اور عیسائیوں کی شرح 6فیصد ہے۔ کل آبادی سات لاکھ مسلمانوں پر مشتمل ہے۔ فرانسیسی اور عربی سرکاری زبانیں ہیں اس کے علاوہ صومالی اور عفار بھی بولی جاتی ہیں۔

حکومت و سیاست

جمہوریہ جبوتی کے دارالحکومت کا نام بھی جبوتی ہی ہے ۔ طرز حکومت جمہوری اور آئینی سربراہ مملکت صدر جبکہ وزیر اعظم سربراہ حکومت ہوتا ہے۔ موجودہ صدر کا نام اسماعیل عمر گل ہے،یہ۱۹۹۹ء سے حکومت کر رہے ہیں اور عوام ان سے آج بھی بہت خوش ہیں۔۔یہ واحد افریقی ملک ہے، جو فرانس کی نوآبادیاتی کی وجہ سے یورپی، افریقی اور عرب یونین کا ممبر ہے۔

جبوتی کے متعلق دیگر معلومات درج ذیل ہیں:

کرنسی: جبوتی فرانک، Djiboutian franc
انٹرنیٹ کنٹری کوڈ :.dj
مشہور ویب سائٹس:جبوتی وکی پیڈیا پر،    جبوتی بی بی سی پر

جبوتی ملک کا جھنڈا

جبوتی ملک کا جھنڈا

اسلامی ملک جبوتی کا تعارف Reviewed by on . جبوتی کی تاریخ : اس خطے میں عربوں کی آمد تیسری صدی عیسوی میں ہوئی۔ موجودہ دور کے ’’عفار ‘‘لوگ جو جبوتی کے دو بڑے نسلی گروہوں میں سے ایک ہیں ان کے آباؤ اجداد کا جبوتی کی تاریخ : اس خطے میں عربوں کی آمد تیسری صدی عیسوی میں ہوئی۔ موجودہ دور کے ’’عفار ‘‘لوگ جو جبوتی کے دو بڑے نسلی گروہوں میں سے ایک ہیں ان کے آباؤ اجداد کا Rating:
scroll to top