ہفتہ , 21 اکتوبر 2017

Home » اہم » جنگلات کی حفاظت- بنی نوع انسان کی بقاء

جنگلات کی حفاظت- بنی نوع انسان کی بقاء

ملک کی متوازن معیشت کے لئے ضروری ہے کہ اس کے بیس فیصد رقبے پر جنگلات ہوں۔ لیکن سرکاری اعداد وشمار کے مطابق پاکستان کے کل رقبے کا صرف پانچ فیصد جنگلات پر مشتمل ہے جبکہ غیر سرکاری حلقوں کے مطابق پاکستان کے پاس صرف تین فیصد جنگلات باقی ہیں۔ ان میں سے بھی ہر سال قریباً اکتالیس ہزار ہیکٹر جنگل غائب ہو رہا ہے۔ اس میں آگ، کیڑے مکوڑوں اور نباتاتی بیماریوں کا قصور صرف چھ فیصد ہے، بقیہ 94 فیصد جنگل کی صفائی کے ذمہ دار کمرشل اور نون کمرشل، قانونی و غیر قانونی انسانی ہاتھ ہیں۔ جو جنگل بچ گیا ہے وہ کتنی تیزی سے غائب ہو رہا ہے اس کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ صوبہ خیبر پختونخواہ کے محکمہ جنگلات کے خلاف ایک شکایت موصول ہونے پر ڈائریکٹر جنرل قومی احتساب بیورو نے انکوائری کا حکم دیا ہے جس میں بتایا گیا ہے کہ محکمہ جنگلات کے ریکارڈکے مطابق 1992ء میں شیشم کے 80064 درخت تھے جن کی پیمائش 2 کروڑ 4 لاکھ 32 ہزار 863 مکعب فٹ تھی۔ریکارڈ کے مطابق 18064 شیشم کے درخت قانون کے مطابق نیلامی اور دوسرے طریقے سے محکمہ جنگلات مردان ڈویڑن نے فروخت کئے جب انکوائری ٹیم نے درختوں کی گنتی اور پیمائش کی تو پتہ چلا کہ 35000 شیشم کے مزید درخت جن کی مالیت کروڑوں میں ہے غائب ہیں۔ اور ایسا ہی حال ملک کے دیگر جنگلات میں بھی ہو رہا ہے اگرچہ حکومت اپنے اعداد و شمار کے ذریعے یہ ثابت کرنے پر مصر ہے کہ گذشتہ دس برسوں میں جنگلات پر مبنی کل رقبہ چار اعشاریہ آٹھ سے بڑھ کر پانچ اعشاریہ صفر ایک فیصد ہوگیا ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس اضافے کی بڑی وجہ فارموں میں کاشت کردہ درختوں کی تعداد میں اضافہ ہے۔ایسے حالات میں جنگلات کی ضرورت اور بڑھ جاتی ہے۔ اگرچہ حکومت پنجاب نے بھی گذشتہ برس اینگرو پولی مر اینڈ کیمیکلز لمیٹیڈ نامی کمپنی سے میمورنڈم آف اندرسٹینڈنگ پر چھانگا مانگا کے جنگل میںدستخط کیے تھے جس کے مطابق اینگرو پولی مر کمپنی نئے جنگل لگانے میں حکومت پنجاب کی مالی معاونت کرے گی جبکہ اس پروگرام کی مانیٹرنگ اقوام متحدہ کا ادارہ ڈبلیو ڈبلیو ایف پاکستان کرے گا۔ پنجاب کے محکمہ جنگلات کا کہنا ہے کہ حکومت پاکستان کے ویثرن 2030ء کے حصول کیلئے 2015ء تک 6 فیصد تک جنگلات بڑھانے کیلئے نجی مدد ضروری ہے۔

جنگلات کی حفاظت- بنی نوع انسان کی بقاء Reviewed by on . ملک کی متوازن معیشت کے لئے ضروری ہے کہ اس کے بیس فیصد رقبے پر جنگلات ہوں۔ لیکن سرکاری اعداد وشمار کے مطابق پاکستان کے کل رقبے کا صرف پانچ فیصد جنگلات پر مشتمل ہ ملک کی متوازن معیشت کے لئے ضروری ہے کہ اس کے بیس فیصد رقبے پر جنگلات ہوں۔ لیکن سرکاری اعداد وشمار کے مطابق پاکستان کے کل رقبے کا صرف پانچ فیصد جنگلات پر مشتمل ہ Rating: 0

Leave a Comment

scroll to top