پیر , 23 اکتوبر 2017

Home » تازہ ترین » سات سالہ پاکستانی طالب علم دنیا کا کم عمر ترین کمپیوٹر پروگرامر

سات سالہ پاکستانی طالب علم دنیا کا کم عمر ترین کمپیوٹر پروگرامر

7 برس کے کم عمر پاکستانی نژاد طالب علم نے دنیا کے کم عمر ترین کمپیوٹر پروگرامر ہونے کا اعزاز اپنے نام کرلیا۔لاہور میں پیدا ہونے والے حمزہ شہزاد نے مائیکرو سافٹ کے امتحان ’361-98 سافٹ ویئر ڈیویلپمنٹ فنڈامینٹلز‘ میں کامیابی حاصل کر کے اپنے خاندان اور ملک کا نام روشن کردیا۔اس امتحان میں سرٹیفیکٹ حاصل کرنے کے لیے 700 پوائنٹس کی ضرورت ہوتی ہے لیکن حمزہ نے 757 پوائنٹس حاصل کیے۔ حمزہ اب مختلف ویب ایپس بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔حمزہ کے والد عاصم شہزاد 2011 میں برطانیہ منتقل ہوئے جہاں وہ ایک مشہور آئی ٹی کمپنی میں کام کر رہے ہیں۔ حمزہ کے والدین کا کہنا ہے کہ ان کے بیٹے کو بچپن ہی سے کمپیوٹر سے دلچسپی تھی اور انہوں نے کبھی اسے یہ سیکھنے کے لیے مجبور نہیں کیا۔وہ اپنے بیٹے کی کامیابیوں پر نہایت خوش اور اس کے روشن مستقبل کے لیے دعاگو ہیں۔حمزہ اس سے قبل گزشتہ برس بھی صرف چھ برس کی عمر میں سب سے کم عمر ایم ایس آفس اسپیشلسٹ کا اعزاز حاصل کر چکا ہے۔ وہ مائیکرو سافٹ کے بانی بل گیٹس سے بے حد متاثر ہے اور بڑا ہو کر انہی کی طرح بننا چاہتا ہے۔حمزہ کا کہنا ہے کہ اسے کمپیوٹر کے مختلف پروگرامز استعمال کرنے میں بے حد مزہ آتا ہے اور آج کل وہ اپنا ایک گیم تیار کر رہا ہے۔دوسری جانب مائیکرو سافٹ کے ترجمان نے بھی اپنے ایک بیان میں حمزہ شہزاد کی قابلیت اور مہارت کا اعتراف کیا ہے۔واضح رہے کہ اس سے قبل بھی پاکستان کی ایک اور باصلاحیت اور ذہین طالبہ ارفع کریم کو 9 برس کی عمر میں دنیا کی کم عمر ترین آئی ٹی اسپیشلسٹ بننے کا اعزاز حاصل ہوچکا ہے۔ ارفع کریم 16 برس کی عمر میں انتقال کر گئی تھیں۔

سات سالہ پاکستانی طالب علم دنیا کا کم عمر ترین کمپیوٹر پروگرامر Reviewed by on . 7 برس کے کم عمر پاکستانی نژاد طالب علم نے دنیا کے کم عمر ترین کمپیوٹر پروگرامر ہونے کا اعزاز اپنے نام کرلیا۔لاہور میں پیدا ہونے والے حمزہ شہزاد نے مائیکرو سافٹ 7 برس کے کم عمر پاکستانی نژاد طالب علم نے دنیا کے کم عمر ترین کمپیوٹر پروگرامر ہونے کا اعزاز اپنے نام کرلیا۔لاہور میں پیدا ہونے والے حمزہ شہزاد نے مائیکرو سافٹ Rating: 0

Leave a Comment

scroll to top