اتوار , 23 جولائی 2017

Home » تازہ ترین » فرد کی نشور نما میں ثقافت کا کردار:-

فرد کی نشور نما میں ثقافت کا کردار:-

کسی بھی معاشرے کی ثقافت وہاں کی اقدار رجحانات اور مقاصد کو واضح کرتی ہے وہ معاشرہ ان ہی اقدار کے تحت ترقی کرتا ہے اور ضرورت پڑنے پر ثقافتی اقدار میں مناسب تبدیلی بھی کر لیتا ہ۔ ثقافت کا مرکزی فعل معاشرے کے ارکان کی زندگی میں نظم و ضبط پیدا کرنا ہےاس طرح افراد کی زندگی بہتر اور پرسکون
گزرتی ہے۔ ثقافت معاشرتی زندگی کے اصول و ضوابط ورسم ورواج اور عقائد کی نشورنما کا مرحلہ پیدائش
کے فورا بعد شروع ہو جاتا ہے جو تقریبا دوربلوغت تک جاری رہتا ہے۔ ثقافت میں انسان کی زندگی سے
متعلق تمام عوامل شامل ہوتے ہیں جس کی وجہ سے جیسے جیسے بالیدگی اور نشورنما کے مراحل طے کرتا ہے ثقافت بھی ان دوران اثرانداز ہوتی ہے۔
بچے کی نشورنما کا پہلا دور طفلی دور کہلاتا ہے جو پیدائش سے تقریبا پانچ سال تک رہتا ہے۔ اس دور میں بچے کی نشورنما تیزی سے ہوتی ہے
بچہ اردگر کے ماحول سے واقف ہونے لگتا ہے۔ اس دور میں بچے کی شخصیت پر ثقافت کے اثرات انتہائی
گہرے اور پائیدار ہوتے ہیں اور تمام عمر تک محسوس کیے جاتے ہیں۔ نشورنما کا دوسرا دور بچپن کا دور ہوتا ہے جو تقریبا چھہ سال سے 12سال تک جاری رہتا ہے۔اس دور میں بچے کی جسمانی نشورنما کے ساتھ
ساتھ ذہنی جزباتی اور معاشرتی نشورنما کا بھی آغاز ہو جاتا ہے۔ بچہ گھر کی ثقافت کے ساتھ ساتھ دوسری ٹقافتوں سے بھی آگاہ ہونے لگتا ہے۔ تعلیم کا عمل بھی شروع ہو جاتا ہے جو ثقافت کی ترسیل کا اہم وسیلہ ہے وہاں بھی بچے کی کردار سازی ہوتی ہے۔ بچے کو مذہب'عقائد'رسمورواج اور طور طریقوں سے آگاہ کیا جاتا ہے ایک ہی ثقافت رکھنے والے بچوں کی دلچسپیاں اور مشاغل اور طرز زندگی ایک جیسا ہوتا ہے جبکہ مختلف ثقافتوں سے تعلق رکھنے والے بچوں میں فرق نمایاں نظر آتا ہے۔
نشورنما کا اہم ترین دور بلوعت کا دور کہلاتا ہے جو تقریبا 13سال سے18سال ککا عرصہ ہوتا ہے اس دور میں بھی ثقافت کے اثرات بڑے گہرے مرتب ہوتے ہیں اس دور میں مشرقی ثقافت اور مغربی ثقافت کے درمیان فرق محسوس کیا جاتا ہے ۔ مشرقی ثقافت میں اخلاقی حدود کا خیال رکھا جاتا ہے جبکہ مغربی ثقافت میں آزادی اور بے باکی نمایاں نظر آتی ہے۔ مشرقی اور مغربی روایات 'رسم ورواج اور اقدار میں بھی نمایاں تضاد محسوس کیا جاتا ہے۔ ثقافتی سرگرمیوں سے ہی بچوں کی نشورنما کے ادوار کی خصوصیات کا علم ہوتا ہے۔
پچوں کی جزباتی اور ذہنی نشورنما بھی ثافت سے متاثر ہوتی ہے بچوں کو ذہنی سرگرمیاں زیادہ ملتی ہیں تو انکی ذہانت میں اضافہ ہوتا ہےاور جسطرح کے ماحول میں زندگی بسر کرتے ہیںجزبتی کیفیت بھی اس ماحول سے مطابقت کر لیتی ہے ثثقفتی سرگرمیوں میں بھی یہی خوبیاں موجود ہوتی ہیں جن کی وجہ سے بچوں کی ذہنی اور جذباتی نشورنما متورازن انداذ میں ہوتی ہے معاشرتی نشورنما بھی ثقاافت کی وجہ سے بہتر ہوتی ہے

فرد کی نشور نما میں ثقافت کا کردار:- Reviewed by on . کسی بھی معاشرے کی ثقافت وہاں کی اقدار رجحانات اور مقاصد کو واضح کرتی ہے وہ معاشرہ ان ہی اقدار کے تحت ترقی کرتا ہے اور ضرورت پڑنے پر ثقافتی اقدار میں مناسب تبدیل کسی بھی معاشرے کی ثقافت وہاں کی اقدار رجحانات اور مقاصد کو واضح کرتی ہے وہ معاشرہ ان ہی اقدار کے تحت ترقی کرتا ہے اور ضرورت پڑنے پر ثقافتی اقدار میں مناسب تبدیل Rating: 0

Leave a Comment

scroll to top