اتوار , 23 جولائی 2017

Home » جامعات » موسکو اسٹیٹ یونیورسٹی

موسکو اسٹیٹ یونیورسٹی

۱۷۵۵ میں میکھائیل لیمونسوو نے اس یونیورسٹی کو دریافت کیا۔ تب سے اس کا ستارہ چمکنے لگا اور یہ لیمونسوو موسکو یونیورسٹی کہلانے لگی۔ یہ یونیورسٹی روس کے شهر موسکو میں پائی جاتی ہیں۔ دعوہ یه کیا جاتا ہے کہ اس کی عمارت دنیا کی سب سے اونچی یونیورسٹی کی عمارت ہے۔
اس یونیورسٹی میں ۴۰۰۰ تک اساتذہ اور ۱۵۰۰۰ تک ان کے معاون کام کرتے ہیں۔ اس میں ۴۰۰۰ سے اوپر طلبا گریجویشن کے لیے اور ۷۰۰۰ تک اعلیٰ تعلیم کے لیے ہر سال داخلہ لیتے ہیں۔
ماسکو انسٹیٹیوٹ آف فزکس اینڈ ٹیکنالوجی اور ماسکو اسٹیٹ انسٹیٹیوٹ آف انٹرنیشنل ریلیشن اس ادارے سے نکلا ہیں۔ اس یونیورسٹی کے دنیا بھر کی یونیورسیٹیز کے ساتھ بہترین تعلقات ہے۔ یونیسکو کے ساتھ یہ مختلف پروگرام ترتیب دیتی ہے جس میں سرفہرست طلباء کا تبادلہ ہیں۔
اس یونیورسٹی کا اعزاز ہے کہ اس نے اب تک ۶۰ سائنسدانوں اور سیاستدانوں کو ڈگریاں دی ہیں جنھوں نے اپنے ملک جا کر بڑے بڑے کارنامے کیے ہیں۔
اس کا معیارِ تعلیم بہت اونچا ہے۔ یہ اکیڈمک رینکنک آف دی ورلڈ یونیورسٹی کے بارھویں نمبر پر، کیو-ایس ورلڈ یونیورسٹی رینکنگ کے نمبر ۲۰۰ پر اور ٹا ئمز ہائر ورلڈ یونیورسٹی رینکینگ کے نمبر ۲۹۶ پر ہیں۔
اس کی تعمیر ۲۵ جنوری ۱۷۵۵ میں هونا شروع ہوئی اور اس کا پہلا درس ۲۶ اپریل کو دید گیا۔ یہ روس کی بلاشبہ پہترین اور سب سے پرانی یونیورسٹی ہیں۔ آٹھارویں صدی میں اس کے صرف تین ڈپارٹمنٹ تھیے جبکہ اب تو اس میں ہر مضمون پڑھایا جارہا ہے۔
۲۰۰۸ میں روس کے سب سے سپر کمپیوٹر اس یونیورسٹی کے طالبِ علموں کی ایجاد ہیں۔ یہ ۱۹۹۰ تک یورپ کی سب سے اونچی یونورسٹی تهی

اس یونورسٹی میں میوزیم ، تھیٹر، بینک آفس، کینٹن، سویمنگ پول، لائبریری وغیرہ کی سہولیات میسرہیں

موسکو اسٹیٹ یونیورسٹی Reviewed by on . ۱۷۵۵ میں میکھائیل لیمونسوو نے اس یونیورسٹی کو دریافت کیا۔ تب سے اس کا ستارہ چمکنے لگا اور یہ لیمونسوو موسکو یونیورسٹی کہلانے لگی۔ یہ یونیورسٹی روس کے شهر موسکو ۱۷۵۵ میں میکھائیل لیمونسوو نے اس یونیورسٹی کو دریافت کیا۔ تب سے اس کا ستارہ چمکنے لگا اور یہ لیمونسوو موسکو یونیورسٹی کہلانے لگی۔ یہ یونیورسٹی روس کے شهر موسکو Rating:
scroll to top