جمعرات , 27 جولائی 2017

Home » اہم » ٦ ستمبر۔۔۔۔۔۔پاکستانی تاریخ کا روشن باب:

٦ ستمبر۔۔۔۔۔۔پاکستانی تاریخ کا روشن باب:

ملک بھر میں 51 واں یوم دفاع پاکستان آج انتہائی جوش و جذبے سے منایا جارہاہے.آج 1965کی جنگ کے شہدا کی لازوال قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کرنے کا دن ہے۔یوم دفاعِ پاکستان ہمیں اس دن کی یاد دلاتا ہے، جب پاکستان کے شہیدوں، جری جوانوں نے اپنی سرحدوں کے بہادر اورغیّور پاسبانوں کی فہرست میں اپنا نام رقم کیا۔ ان کا یہ ہی جذبۂ شجاعت تھا، جس نے پاکستانی عوام کے ساتھ مل کر اپنے سے پانچ گنا بڑے اور جدید اسلحہ سے لیس دشمن کے ناپاک ارادوں کو خاک میں ملا دیا۔اس جنگ کا پس منظر یہ تھا کہ 1962 میں بھارت نے چین کو دعوت مبارزت دی مگر منہ کی کھائی۔ چین ازخود جنگ بند نہ کردیتا تو بھارت صدیوں تک ذلت کے داغ دھو نہ سکتا۔1965 میں بھارت نے رن کچھ کے محاذ پر پاکستان سے پنجہ آزمائی کی مگر ذلت اٹھانا پڑی، جس پر بھارتی وزیراعظم نے اعلان کیا کہ اب ہم مرضی کا محاذ منتخب کر کے پاکستان کو مزا چکھائیں گے۔چنانچہ بھارت نے چھ ستمبر کو اچانک لاہور کے تین اطراف سے حملہ کر دیا۔لیکن ہماری بہادر افواج نے انکے ناپاک عزائم کو خاک میں ملا دیا۔چھمب پر بھارت سے پہلی فضائی جھڑپ ہوئی۔فضائی تاریخ کا ناقابل فراموش معرکہ ایم ایم عالم کا ہے۔ انہوں نے سرگودھا کے قریب ایک ہی جھڑپ میں چند سیکنڈ کے اندر دشمن کے پانچ طیارے گرا کر عالمی ریکارڈ قائم کر دیا۔سترہ روز جنگ کے دوران پاکستان کے جرات مند ہوابازوں نے35 طیاروں کو دوبدو مقابلے میں اور 43 کو زمین پر ہی تباہ کر دیا تھا۔ 32 طیارے، طیارہ شکن توپوں کا نشانہ بنے۔ بھارت کے مجموعی طور پر110 طیارے تباہ کیے گئے۔ ہماری فضائیہ نے دشمن کے149 ٹینک 200 بڑی گاڑیاں اور20 بڑی توپیں بھی تباہ کیں جبکہ ہمارے صرف 19 طیارے تباہ ہوئے۔جنگ ستمبر میں پاک بحریہ کو سمندری جنگ کے معرکوں میں جو برتری حاصل رہی، ان میں معرکہ دوارکا قابل ذکر ہے۔ یہ معرکہ پاک بحریہ کی تاریخ میں یادگار ہے۔ دوارکا کی تباہی کا بیرونی اخبارات میں بڑا چرچا ہوا۔ برطانوی اخبارات نے تو خاص طور پر کہا کہ پہلی جنگ عظیم کے بعد بھارت کی سرزمین پر سمندر کی جانب سے پہلی گولہ باری ہوئی ہے۔ انہوں پاک بحریہ کی مستعدی کی تعریف کی۔
اس موقع پر جہاں پاکستان کی تینوں مسلح افواج ہر محاذ پر برسرپیکار تھیں، وہاں لاہور کے عوام کا جذبہ بھی بت مثال اور دیدنی تھا۔ پاکستانی عوام فضا میں پاک فضائیہ کے شاہینوں کی کاروائیاں ایسے دیکھتے، جیسے پتنگ بازی ہورہی ہے، دشمن کا طیارہ گرتاتو چھتوں پر بوکاٹا کا شور مچتا۔سن 1965 کی پاک بھارت جنگ میں پاکستان کی بہادرافواج نے بھارت کو ناکوں چنے چبوا دیے۔ ہرکوئی اپنے اپنے انداز میں وطن عزیز کے لیے قربانی دینے کو بے قرارتھا، اس دوران فنکاروں اور گلوکاروں کا کردار بھی قابل دید رہا۔
پاک فوج اور وطن سے محبت کا اظہار کرنے والے چند ملی نغمے اسے بھی ہیں جو کئی دہائیوں سے ہر محب وطن کے دلوں میں اپنی جگہ بنائے ہوئے ہیں، جن میں پاک فوج کے بہادری اور جذبے کیا ذکر کیا گیا ہے۔
انیس سو پینسٹھ کی پاک بھارت جنگ میں ملکہ ترنم نور جہاں کو سب سے زیادہ ملی ترانے ریکارڈ کرانے کا اعزاز حاصل ہوا،جنگ کے پرجوش لمحات میں ملکہ ترنم نور جہاں کے گیت نشر ہوتے تو میدان جنگ میں لڑنے والے پاک افواج کے جوانوں کے حوصلے بلند ہوجاتے، ساتھ ہی عوام پر بھی وجد طاری ہوجاتااور ہر کوئی میدان جنگ کی طرف چل دیتا۔١٩٦٥ء کی جنگ میں بھارت کو عبرت ناک شکست کا سامنا کرنا پڑا اور پاکستانی افواج اور قوم سرخرو ہوئی۔ اور پاکستانی قوم نے یہ ثابت کر دیکھایا کہ اب دشمن نے اس دھرتی کو میلی آنکھ سے دیکھا تو اوسے منہ توڑ جواب دیں گے۔

٦ ستمبر۔۔۔۔۔۔پاکستانی تاریخ کا روشن باب: Reviewed by on . ملک بھر میں 51 واں یوم دفاع پاکستان آج انتہائی جوش و جذبے سے منایا جارہاہے.آج 1965کی جنگ کے شہدا کی لازوال قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کرنے کا دن ہے۔یوم دفاعِ پ ملک بھر میں 51 واں یوم دفاع پاکستان آج انتہائی جوش و جذبے سے منایا جارہاہے.آج 1965کی جنگ کے شہدا کی لازوال قربانیوں کو خراج عقیدت پیش کرنے کا دن ہے۔یوم دفاعِ پ Rating: 0

Leave a Comment

scroll to top