جمعہ , 21 جولائی 2017

Home » بندرگاہیں » پاکستان کی دوسری بندرگاہ

پاکستان کی دوسری بندرگاہ

محمد بن قاسم پاکستان کی دوسری مصروف ترین بندرگاہ ہے۔ کراچی کے بعد یہ پاکستان کی دوسری سب سے بڑی بندرگاہ ہے۔مقامی لوگ اسے عموماً اس کے مختصر نامپورٹ قاسمسے جانتے ہیں۔ یہاں سے سالانہ ۱.۷ کروڑ ٹنکے سامان کی تجارت ہوتی ہے جو پاکستان کے کل تجارتی حجم کا تقریباً ۳۵ فیصد ہے۔
١٩٧٠ میں اسے وزیراعظم ذولفقار بھٹو کی قیادت میں کراچی کے جنوب میں کراچی کی بندرگاہ پر رش کو کم کرنے کی غرض سے تعمیر کیا گیا۔ ۔ اس کا اہم مقصد لوہے کے خام مال کی برآمدات اور پاکستان اسٹیل مل کی پیداوار کے ساتھ معاملہ کرنا تھا . بندرگاہ کا نام سنده کے فاتح محمد بن قاسم کے نام پر رکھا گیا۔بندرگاہ دریائے سندھ کے ڈیلٹااور پاکستان اسٹیل ملزکے قریب تعمیر کی گئی ہے۔
محمد بن قاسم بندرگاه معینہ مقام کے اعتبار سے بےانتہاء اہمیت کی حامل ہے۔یه بحیرہ عرب پر کراچی سے ۳۵ کلومیٹر مشرق کی جانب واقع ہے۔ یہ کراچی میں ملیر کے جنوب میں محمد بن قاسم ٹائون میں پائی جاتی ہے۔ یہ نیشنل ہائی وے سے ۱۵ کلومیٹر کے فاصلے پر ہیں۔ یہ کورنگی کے صنعتی علاقے کے قریب ہے جس کی وجہ سے ٹرانسپورٹیشن کے خرچے کی بچت ہیں۔
۲۰۰۳ میں تسمان آئل کراچی کے ساحل پر الٹ گیا جس کی وجہ سے بےشمار سمندری مچھلی اور جانور زہریلے ہو گئے اور مقامی باشندوں کو متلی کی شکایت رہنے لگی۔ کہا یہ جاتا تھا کہ شاید اس کا اثر پورٹ قاسم پر پڑیں گا مگر ایسا کچھ دیکھنے میں نہیں آیا۔

پاکستان کی دوسری بندرگاہ Reviewed by on . محمد بن قاسم پاکستان کی دوسری مصروف ترین بندرگاہ ہے۔ کراچی کے بعد یہ پاکستان کی دوسری سب سے بڑی بندرگاہ ہے۔مقامی لوگ اسے عموماً اس کے مختصر نامپورٹ قاسمسے جانتے محمد بن قاسم پاکستان کی دوسری مصروف ترین بندرگاہ ہے۔ کراچی کے بعد یہ پاکستان کی دوسری سب سے بڑی بندرگاہ ہے۔مقامی لوگ اسے عموماً اس کے مختصر نامپورٹ قاسمسے جانتے Rating:
scroll to top