جمعرات , 27 جولائی 2017

Home » تاریخ کے جھروکے سے » پاکستان کی معیشت اور زراعت کا کردار

پاکستان کی معیشت اور زراعت کا کردار

ملکی معیشت ایک زندہ جسم کی مانند ہوتی ہے جس میں متعدد شعبے زراعت، صنعت و تجاررت، ذرائع آمدورفت و دیگر شامل ہوتے ہیں۔ پاکستان بنیادی طور پر ایک زرعی ملک ہے اور آبادی کا ۰۶ سے ۰۷ فیصد حصہ زراعت کے شعبے سے وابسطہ ہے، اس اعتبار سے پاکستان کی معیشت کا دارومدار زراعت پر ہے۔ ملکی صنعتوں کے لئے خام مال کی فراہمی زرعی شعبے کے باعث ہی ممکن ہوتی ہے جبکہ ملکی آبادی کو خوراک کی فراہمی اور پیداوار بھی زرعی شعبہ ہی مہیا کرتا ہے۔
ماہرین کا کہنا ہے کہ زرعی شعبی ملکی معیشت کے لئے ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت رکھتا ہے۔ پاکستان کے زرعی شعبے کی ترقی ملکی معیشت کی ترقی جبکہ زرعی شعبے کی تباہی ملک کی تباہی ہے۔ اس شعبے کو جس قدر ترقی دی جائےگی ملکی معیشت اسی قدر مستحکم ہوتی جائے گی۔ پاکستان کی زرعی حکمت عملی میں خود کفالت کے اصولوں کو مرکزی حیثیت حاصل ہے۔ زرعی پیداوار کو بڑھانے اور غذائی لحاظ سے اپنے ملک کو خودکفیل بنانے کے لئے کوششیں جاری ہیں۔زرعی شعبہ ملکی صنعتوں کی بنیاد ہے۔ زرعی ترقی کے بغیر ملک میں صنعتیں لگانا ناممکن ہے کیونکہ ان کے لئے خام مال یہی شعبہ فراہم کرتا ہے۔ جس قدر زیادہ سے زیاادہ خام مال فراہم ہوتا رہتا ہے اسی قدر صنعتی پیداوار اور ترقی ہوتی رہتی ہے۔ اس کے برعکس اگر زرعی پیداوار میں کمی کے باعث خام مال کی فراہمی میں تاخیر آجائے تو صنعتی ترقی رک جاتی ہے اور صنعتیں زوال کا شکار ہو جاتی ہیں۔
زرعی ترقی سے نہ صرف ملکی دولت میں اضافہ ہوتا ہے بلکہ اس سے عوام کے کاروبار کو بھی چار چاند لگ جاتے ہیں اور ان کی طرز زندگی میں بھی نمایاں تبدیلیاں رونما ہو جاتی ہیں۔ معاشی استحکام سے عوام خوش رہتے ہیں اور انکا معیار زندگی بھی بلند ہو جاتا ہے۔ عوام کو ضروریات زندگی کو پور کرنے کے لئے زیادہ سے زیادہ کاروبار اور روزگار ملنے لگتا ہے تو وہ معاشرتی برائیوں اور ناجائز ذرائع آمدنی سے بھی بچ جاتے ہیں۔ زرعی شعبے کی اعلی اور بہتریں پیداوار حاصل ہونے کی صورت میں ملکی معیشت میں بہتری آتی ہے جبکہ بیرونی منڈیوں سے اچھے برآمدی آڈرز موصول ہوتے ہیں۔

ہم اس حقیقت کو کب اپنے پلے با ندھیں گے کہ زراعت کوترقی دیئے بغیر اور اس ملک کے کسان کی حالت زار میں بہتری لائے بغیر ہم خود کو زراعت میں خود کفیل نہیں بنا سکتے ہیں۔ دنیا کے اکثر ترقی یافتہ ممالک نے سب سے پہلے زرعی نظام میں اصلاحات اور کسان دوست پالیسیوں کو لاگو کرکے ہی زراعت میں خود کفالت حاصل کی ہے، کیونکہ زراعت کے بغیر نہ تو صنعت کا پہیہ چل سکتا ہے اور نہ مقررہ شرح نمو اور ترقی و خوشحالی کے پیرا میٹرز پر عملدر آمد کو یقینی بنا یا جاسکتا ہے۔ ضرورت اس امر کی ہے کہ زراعت کے شعبہ کی ترقی کے سلسلے میں موثر اقدامات کیے جائے اور سیلاب کی صورتحال کے پیش نظر ایسی حکمت عملیاں مرتب کیں جائیں جس سے زرعی کاشت کے علاقوں کوسیلاب اور طوفانوں سے محفوظ رکھا جاسکے۔ زرعی اشیاءکی فروخت کے حوالے سے نئی منڈیوں تلاش کرنے کی ضرورت ہے۔

پاکستان کی معیشت اور زراعت کا کردار Reviewed by on . ملکی معیشت ایک زندہ جسم کی مانند ہوتی ہے جس میں متعدد شعبے زراعت، صنعت و تجاررت، ذرائع آمدورفت و دیگر شامل ہوتے ہیں۔ پاکستان بنیادی طور پر ایک زرعی ملک ہے اور آ ملکی معیشت ایک زندہ جسم کی مانند ہوتی ہے جس میں متعدد شعبے زراعت، صنعت و تجاررت، ذرائع آمدورفت و دیگر شامل ہوتے ہیں۔ پاکستان بنیادی طور پر ایک زرعی ملک ہے اور آ Rating: 0

Leave a Comment

scroll to top